بانی: عبداللہ بٹ      ایڈیٹرانچیف : عاقل جمال بٹ

بانی: عبداللہ بٹ

ایڈیٹرانچیف : عاقل جمال بٹ

سپریم کورٹ نے فیض آباد دھرنا رپورٹ کو ’دقیانوسی‘ قرار دے دیا

سپریم کورٹ نے 2017 میں 20 روزہ فیض آباد دھرنے کے حوالے سے خصوصی کمیشن کی رپورٹ کو تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے اسے دقیانوسی قرار دے دیا۔

نجی اخبار کی رپورٹ کے مطابق سپریم کورٹ کی جانب سے ہفتے کو جاری ہونے والے 3 صفحات پر مشتمل حکم نامے میں کہا گیا کہ کمیشن کی رپورٹ میں ٹرمز آف ریفرنس (ٹی او آر) پر توجہ نہیں دی گئی اور غلط اندازہ لگایا گیا کہ اسلام آباد جانے اور احتجاج کرنے کا حق ممنوع ہے، عدالت نے مشاہدہ کیا کہ رپورٹ جانبدارانہ تھی اور اس نے عدالت کی طرف سے جاری کیے گئے احکامات اور فیصلے کے دیگر پہلوؤں پر غور نہیں کیا۔

کمیشن کی رپورٹ پر تشدد کے مرتکب افراد کو بری کرنے اور سیاسی سرپرستی میں شامل افراد کو سزا دینے پر بھی تنقید کی گئی ہے، سپریم کورٹ نے نوٹ کیا کہ رپورٹ میں بغیر کسی وضاحت کے دوسرے کی گواہی پر ایک شخص کے بیان کو ترجیح دی گئی، تعصب کا مظاہرہ کیا گیا اور کمیشن کی غیر جانبداری پر سمجھوتہ کیا گیا۔

جب اٹارنی جنرل منصور عثمان اعوان سے پوچھا گیا کہ کیا وفاقی حکومت نے رپورٹ کی توثیق کی ہے تو انہوں نے جواب دیا کہ حکومت اس حوالے سے جواب جمع کروائے گی، تاہم، انہوں نے اپنی رائے میں کہا کہ رپورٹ میں مادہ کی کمی تھی اور اس میں ٹی او آرز کے مطابق مکمل بات نہیں کی گئی۔

سپریم کورٹ نے اٹارنی جنرل کو ہدایت کی کہ وہ حکومت کا جواب جمع کرائیں اور اس بارے میں ہدایات حاصل کریں کہ آیا حکومت کمیشن کی رپورٹ کو عام کرنا چاہتی ہے یا نہیں، عدالت نے کمیشن کے ارکان اور چیئرمین کو ابتدائی مشاہدات کا تحریری جواب دینے کی ہدایت بھی کی اور کہا کہ اگر وہ ذاتی طور پر مزید جواب دینا چاہیں تو آئندہ سماعت پر حاضر ہوسکتے ہیں۔

سپریم کورٹ کے حکم نے ان اہم پہلوؤں کو حل کرنے میں کمیشن کی ناکامی کو اجاگر کیا، جس سے رپورٹ کی ساکھ اور غیر جانبداری پر سوالات اٹھتے ہیں۔

ٹی او آرز میں کمیشن سے مطالبہ کیا گیا ہے کہ وہ فیض آباد دھرنا کرنے کے لیے تحریک لبیک پاکستان کو فراہم کی گئی غیر قانونی مالی یا دیگر معاونت کی انکوائری کرے، فتوے یا فتوے جاری کرنے والوں کے خلاف کارروائی کی سفارش کرے، براڈ کاسٹرز اور کیبل آپریٹرز کے خلاف پاکستان الیکٹرانک میڈیا ریگولیٹری اتھارٹی (پیمرا) کی کارروائی انکوائری کرے، سوشل میڈیا کے ذریعے نفرت اور تشدد کے پھیلاؤ کی جانچ کرے، ذمہ داروں کا تعین کریں اور ریلیوں، احتجاج اور دھرنوں سے نمٹنے کے لیے اقدامات کی سفارش کریں۔