بانی: عبداللہ بٹ      ایڈیٹرانچیف : عاقل جمال بٹ

بانی: عبداللہ بٹ

ایڈیٹرانچیف : عاقل جمال بٹ

شرح سود میں مزید اضافہ کاروبار اور سرمایہ کاری کیلئے تباہ کن ثابت ہو گا، احسن بختاوری

اسلام آباد (ممتازنیوز) اسلام آباد چیمبر آف کامرس اینڈ انڈسٹری کے صدر احسن ظفر بختاوری نے کہا کہ موجودہ معاشی بحران اور بجلی، گیس و تیل کی مہنگی قیمتوں کی وجہ سے کاروباری طبقہ پہلے ہی مشکلات سے دوچار ہے کیونکہ کاروبار کی لاگت میں کئی گنا اضافہ ہو گیا ہے۔ ان ناسازگار حالات میں سٹیٹ بینک آف پاکستان نے شرح سود کو مزید بڑھا کر 17فیصد کر دیا ہے جو کاروبار اور سرمایہ کاری کیلئے تباہ کن ثابت ہو گا جبکہ مہنگائی مزید بڑھے گی۔ انہوں نے کہا کہ معیشت کی بحالی کیلئے پاکستان کو اس وقت کاروبار اور سرمایہ کاری کو بہتر فروغ دینے کی اشد ضرورت ہے لیکن شرح سود میں مزید اضافہ سے کاروبار کیلئے بینکوں سے قرضہ حاصل کرنا بہت مہنگا ہو جائے گا جس سے کاروبار ی سرگرمیا ں بہت متاثر ہوں گی اور معیشت مزید کمزور ہو گی۔انہوں نے کہا کہ شرح سودمیں اضافے کی وجہ سے پاکستان کا بجٹ خسارہ بھی بڑھے گا اور غیرملکی قرضوں میں کئی گنا اضافہ ہو گا کیونکہ ایک محتاط اندازے کے مطابق شرح سود میں ایک فیصد اضافے سے غیر ملکی قرضوں میں 170ارب روپے کا اضافہ ہو جاتا ہے۔ انہوں نے کہا کہ چین میں شرح سود 3.65فیصد، بنگلہ دیش اور ویتنام میں 6فیصد اور انڈیا میں 6.25فیصد ہے لیکن پاکستان میں اس کو بڑھا کر 17فیصد کر دیا گیا ہے جس سے پاکستانی ایکسپورٹرز کیلئے عالمی مارکیٹ میں مقابلہ کرنا مزید مشکل ہو جائے گا۔انہوں نے کہا کہ امریکہ اور یورپ سمیت دنیا میں بہتر ترقی کرنے والے ممالک میں شرح سود 5فیصد سے زیادہ نہیں ہے لیکن پاکستان میں زائد شرح سود کاروبار اور معیشت کی ترقی میں ایک اہم رکاوٹ ثابت ہو گا۔ انہوں نے کہا کہ کاروباری طبقے کا ہمیشہ سے مطالبہ رہا ہے کہ شرح سود کوپانچ فیصد سے کم سطح پر رکھا جائے تا کہ سستا قرضہ فراہم ہونے سے کاروباری و صنعتی سرگرمیوں کوبہتر فروغ ملے اور غیر ملکی سرمایہ کاری میں اضافہ ہو۔ لہذا انہوں نے سٹیٹ بینک آف پاکستان سے پرزور مطالبہ کیا کہ وہ اپنے فیصلے پر نظرثانی کرے اور معیشت کو مزید مشکلات سے بچانے کیلئے شرح سود میں مناسب کمی کرے۔
چیمبر کے سینئر نائب صدر فاد وحید نے کہاکہ ایسے اقدامات سے کوئی بھی غیر ملکی سرمایہ کار پاکستان میں سرمایہ کاری نہیں کرے گا جس سے غیر ملکی سرمایہ کاری مزید کم ہو گی جبکہ پاکستان کو اپنی معیشت کو بہتر کرنے کیلئے غیر ملکی سرمایہ کاری کی بہتر حوصلہ افزائی کرنے کی ضرورت ہے۔ انہوں نے کہا کہ صنعتی شعبے کو مشینری و پلانٹ اور دیگر سامان کے حصول کیلئے بینکوں سے قرضہ لینا پڑتا ہے لیکن شرح سود میں بے جا اضافے کی وجہ سے صنعتی شعبے کی ترقی متاثر ہو گی جس سے برآمدات میں کمی ہو گی اور معیشت کو بحال کرنا مزید مشکل ہو جائے گا۔انہوں نے حکومت سے مطالبہ کیا کہ وہ صنعتی شعبے اور معیشت کو مزید مسائل سے بچانے کیلئے شرح سود میں اضافہ فوری واپس لے۔
چیمبر کے نائب صدر انجینئر محمد اظہر الاسلام ظفر نے کہا کہ نجی شعبہ بینکوں سے فنانسنگ لے کر بڑے تعمیراتی منصوبے شروع کرتا ہے لیکن حکومت نے شرح سود بڑھا کر تعمیراتی صنعت کیلئے نئی مشکلات پیدا کر دی ہیں۔ انہوں نے مطالبہ کیا کہ حکومت شرح سود کو کم کر کے سنگل ڈیجٹ میں لائے جس سے کاروباری و صنعتی شعبے کی ترقی کی راہ ہموار ہو گی، کاروباری سرگرمیوں میں تیزی آئے گی اور معیشت مشکلات سے نکل کر جلد بہتری کی طرف گامزن ہو گی۔